وزیرستان کے لیے جوڈیشل کمپلیکس ٹانک میں قائم، قبائل نے رد کرتے ہوئے احتجاج کی دھمکی دیدی

0

وانا(ای این این ایس) تبدیلی سرکار نے وزیرستان کےلئے جج کو ضلع ٹانک میں تعینات کردیا ہے۔وزیرستان کے مقدمات ٹانک میں سنے جائینگے۔
جنوبی وزیرستان کے قبائل نے پاکستان تحریک انصاف کے غیر منصفانہ فیصلوں کو نہ صرف رد کردیا ہے بلکہ اس قسم کے فیصلوں کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔
ان کا کہنا ہے کہ کسی ضلع کیلئے دوسرے ضلع میں جوڈیشل کمپلیکس کی تعمیر کا مقصد یہ ہوگا کہ موجودہ حکومت وزیرستانیوں کو انصاف دینے میں مخلص نہیں۔
لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ کونسا قانون ہے کہ آپ وزیرستان کےلئے متعین جج کو ضلع ٹانک کے ایک کورٹ میں بیٹھا کر 100 میل دور سے آنے والوں کو انصاف دینگے۔
پاکستان پیپلزپارٹی جنوبی وزیرستان کے صدر امان اللہ خان وزیر نے کہا کہ موجودہ حکومت جنوبی وزیرستان کے باسیوں کو انصاف فراہم کرنے والے منصفوں کیلئے دفاتر ٹانک میں بناکر خاک وزیرستانیوں کو انصاف فراہم کریں گے۔
انہوں نے موجودہ حکومت سے مطالبہ کیا کہ اگر انصاف کی دعویدار سرکار نے ضلع ٹانک میں تعمیر شدہ جوڈیشل کمپلیکس کو وزیرستان منتقل نہ کیا تو پاکستان پیپلزپارٹی جنوبی وزیرستان کے عوام کو لیکر ایک بھرپور تحریک شروع کرے گی۔
عوامی نیشنل پارٹی جنوبی وزیرستان کے رہنما ایاز وزیر کا تو یہ کہنا تھا کہ جب تک عدالتیں وزیرستان میں قائم نہیں کی جاتیں تب تک وہ ،دوسرے ضلع میں وہ عدالتوں میں پیش نہیں ہوں گے۔
انہوں نے کہا کہ یہ حیران کن بات ہے کہ ضلع جنوبی وزیرستان کا جوڈیشنل کمپلکس ایک دوسرے ضلع ٹانک میں بن رہا ہے۔

About Author

Leave A Reply