سکرنڈ: میزان بنک کی مبینہ مجرمانہ غفلت سے عورت کے برطانیہ جانے پر دس سال کے لیے پابندی، احتجاج

0

 سکرنڈ(رپورٹ: گل محمد لغاری) سکرنڈ کی رہائشی خاتون فرحین اسد جس کا شوہر برطانیہ میں مقیم ہے، کافی عرصہ سے برطانیہ جانے اور شوہر کے ہمراہ زندگی گزارنے کے ساتھ ساتھ اعلیٰ تعلیم اور روزگار کے سپنے سجائے کوششوں میں لگی تھی، لیکن اس کے پیروں تلے اس وقت زمین نکل گئی جب برطانوی سفارتخانے سے انہیں ایک لیٹر موصول ہوا، جس میں ان کو جعلی بینک اسٹیٹمینٹ فراہم کرنے کی دفعہ عائد کر کے ان پر برطانوی قانون کے مطابق 10 سال برطانیہ داخلے پر پابندی عائد کردی۔

Farheen Asad talking to media

اس کے بعد فرحین اسد اور ان کے گھر والوں کی جانب سے تحقیقات کی گئی تو معلوم ہوا کہ متاثرہ خاتون نے جو رقم 12 لاکھ روپے اپنے اکاؤنٹ میں جمع کروائی تھی وہ دراصل بینک کے اکاؤنٹ میں ایک ماہ تک جمع ہی نہیں ہوئی، لیکن ان کو رسید دیدی گئی تھی۔ برطانوی سفارتخانے کی جانب سے جب میزان بینک سکرنڈ کی جاری کردہ اسٹیٹمنٹ کی ہیڈ آفس سے تصدیق کروائی گئی تو میزان بینک نے اسٹیٹمنٹ کو جعلی قرار دے دیا. جس کی بنا پر خاتون اکاؤنٹ ہولڈر کو جعل ساز کی دفعہ لگا کر دس سال کی پابندی عائد کی گئی۔
متاثرہ خاتون کے سسر نظام میمن کی جانب سے پہلے سکرنڈ برانچ، پھر ایریا مینیجر حفیظ خاصخیلی اور ریجنل مینیجر حیدرآباد آمین خواجہ کو شکایت کی گئی، لیکن وہ ٹال مٹول کرتے رہے۔
بعد ازاں انتظامیہ نے نہ صرف اپنی غلطی کا اعتراف کیا، بلکہ کراچی ہیڈ آفس سے دو دفعہ انکوائری ٹیم آئی اور ملوث عملے کو بینک سے فارغ کیا گیا، جس کے بعد متاثرہ خاتون فرحین کو اس بات کی یقین دہانی کروائی گئی کے عید الضحیٰ کے بعد ان کو کلئیرنس سرٹیفیکٹ مہیا کردیا جائے گا جس کے بعد آپ کی پابندی برطانیہ میں چلینج کی جاسکے گی، تاہم بینک انتظامیہ کی جانب سے عدم تعاون کے بعد، بینک کے سامنے خاتون اور انکے گھروالوں نے احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ بینک افسران سمیت عملہ مسلسل ٹال مٹول سے کام لے رہا ہے اور صلح کرکے معاملہ ختم کرنے کا کہا جارہا ہے۔
متاثرہ خاتون کا کہنا تھا کہ میزان بینک کے اس فراڈ کی وجہ سے میرا مستقبل داؤ پر لگ گیا ہے، ویزے کے لیے جو رقم خرچ کی 10 لاکھ وہ بھی ڈوب گئی، فراد بھی میرے ساتھ ہوا اور میرے مستقبل کو تباہ کردیا گیا۔
انہوں نے مطالبہ کیا کہ بنک کو بلیک لسٹ کر کے مجھے کلیئرنس لیٹر دیا جائے۔
احتجاج میں ایس یو پی رہنما سید زین شاہ، نازاں دھاریجو,ل، پاکستان تحریک انصاف کے راشد کھہڑو، جماعت اسلامی کے کنور راشد مکرم، شہری اتحاد سکرنڈ کے صدر کے مراد خانزادہ، جمال ناصر گجر، جسقم کے مسعود شاہ سمیت دیگر نے شرکت کی اور فرحین کو انصاف دلوانے کے لیے ہر محاذ پر تعاون کی یقین دہانی کروائی۔

About Author

Leave A Reply