سندھ میں روڈ نیٹورک کی بہتری کے لیے عملے کی استعداد بڑھانے کے لیے ورکشاپ، نثار کھہڑو، نفیسہ شاہ، عمران عطا و دیگر کا خطاب

0

کراچی (ای این این ایس) محکمہ مواصلات وتعمیرات کی جانب سے ایشیائی ترقیاتی بینک کے تعاون سے سندھ بھر میں روڈ نیٹ ورک کی بہتری اور عملے کی استعداد میں اضافے کے لئے ورکشاپ کاانعقاد کیا گیا۔
نثار کھوڑو، نفیسہ شاہ، عمران عطا سومرو ، خالد مرزا ،خرم امتیاز بٹ ،پریم چند، مشتاق میمن ودیگر نے خطاب کیا۔
وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر برائے ورکس اینڈ سروسز نثار احمد کھوڑو نے روڈ سیکٹر میں پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کی طرف سے طے شدہ ہدف کے مقابلے میں مطلوبہ نتائج سے زیادہ حاصل کرنے کے لئے کی جانے والی کوششوں کو اجاگر کیا ہے اور ان کی تعریف کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سندھ نے عوام کا اعتماد بحال کرنے کے لئے عملی اقدامات شروع کرتے ہوئے روڈ سیکٹر میں پبلک پرائیوٹ پارٹنر شپ موڈ میں اپنی مکمل حمایت اورتعاون کو فروغ دیا ہے۔ یہ بات انہوں نے مقامی ہوٹل میں منعقدہ پبلک پرائیوٹ پارٹنر شپ موڈ کے تحت ایشین ڈویلپمنٹ بینک کے تعاون سے سندھ پروونشل روڈ ایمپروومینٹ پروجیکٹ (ایس پی آر آئی پی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ وزیراعلیٰ کے مشیر برائے محکمہ مواصلات وتعمیرات نثار احمد کھوڑو نے کہا ہے کہ موجودہ منتخب حکومت چیلنج کرتی ہے کہ اس جیسا ملک میں کوئی منصوبہ نہیں ہے کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت ہمارے پاس بہت سی کامیاب کہانیاں ہیں جیسے تھر کوئلہ ، روڈ بہتری کے نیٹ ورک ، ادارہ جاتی ، محکمہ / پروجیکٹ اسٹاف کی مضبوطی اور تیاری سندھ روڈ نیٹ ورک ماسٹر پلان (2020-40) انہوں نے مزید اہداف حاصل کرنے ، پی ایس یو کی ٹیم کی کاوشوں کو سراہا۔
اور مزید اہداف حاصل کیے ، 23 ارب روپے کے منصوبے پر لاگت میں 6.4 بلین کی بچت کرتے ہوئے واپس کئے جوکہ سندھ کے عوام کی فلاح وبہبود پر خرچ کئے جائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ روڈ سیکٹر میں بہتری کی کل 9 اسکیموں نے ٹیم ورک صلاحیتوں اور محکمہ کے متعلقہ سربراہ اور اس منصوبے کی رہنمائی کے ساتھ کامیابی کے ساتھ مکمل کیا ہے۔ وزیراعلیٰ کے مشیر نےاس امر پر زور دیا کہ 10/15 سالوں کے دوران تمام خراب شدہ اور ٹوٹے ہوئے روڈ نیٹ ورک کا جامع ڈیٹا تیار کریں تاکہ اب ہم تمام سڑکوں پر مرمت کے ابتدائی کام کو کم لاگت کے ساتھ شروع کرسکیں تاکہ خزانے کو بچایا جاسکے اور انتظار نہ کریںکہ جب تک کہ مکمل روڈ نیٹ ورک کو نقصان پہنچے اور ہم اس پر بہت زیادہ فنڈز خرچ کریں ، نثار کھوڑو نے اس منصوبے پر 25 فیصد مزید کام کرنے کے لئے اے ڈی بی اور ای سی آئی ایل کی وسیع بریفنگ اور وضاحت کی بھی تعریف کی ہے ، انہوں نے صوبہ سندھ کی ترقی کے لئے متعدد ڈونر ایجنسیوں کی حمایت کے لئے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ موڈ کی تعریف کی۔
اس سے قبل سکریٹری مواصلات وتعمیرات عمران عطا سومرو نے اپنی استقبالیہ تقریر میں کہا ہے کہ مقررہ مدت کے اندر، ہدف سے پہلے یہ منصوبہ عوام کے پیسوں کی بچت کے لئے پی ایم یو کی ٹیم کی کوششوں سے مطلوبہ نتائج سے زیادہ حاصل کرچکا ہے جسے عوام کی فلاح وبہبود پر خرچ کیا جائے گا۔انہوں نے منصوبے کے سنگ میل کو حاصل کرنے کے لئے ADB ،ECIL ، Rambollاور PMUPD مشتاق میمن اور ان کی پوری ٹیم کی تعریف کی۔
اے ڈی بی کے نمائندے خرم امتیاز بٹ نے ایس پی آر آئی پی کی بینک کی جانب سے اس منصوبے کی مدد اور نمایاں خصوصیات کے بارے میں بتایا ہے ، انہوں نے اہداف کے حصول سے قبل ہی ٹیم کے کام اور پی ایم یو کی کم سے کم مدت میں عمدہ کارکردگی کی تعریف کی۔ انہوں نے محکمہ سے مزید امکانات وغیرہ کو مزید سہل بنانے اور آپس میں صلاھ مشورہ اور عوام کے فائدے کے لئے اس منصوبے میں مزید بہتری کا جائزہ لینے کے لئے ان پٹ دینے کا مطالبہ کیا۔
سابق چیف انجینئر اور پی ڈی پریم چند تلریجہ، ای سی آئی ایل کے خالد مرزا سی ای او نے بھی منصوبے کے روڈ اثاثہ جات انتظامیہ (رامس) کے بارے میں آگاہ کیا اور کہا کہ فیز 1 کے تحت ، اے ڈی پی نے 197.85 ملین ڈالر کے قرض کی منظوری دی 328 کلومیٹر کی 6 سڑکوں کی بحالی اور محکمہ کو مضبوط بنانے والی کمپنی ، پی سی 1 نومبر 2015 میں ای سی این ای سی سے منظوری دی ہے جس میں مجموعی طور پر22750ملین روپے جن میں90فیصد ADBاور 10فیصد سندھ حکومت کا حصہ ہے ۔ کامیاب بین الاقوامی فارموں کے لئے بین الاقوامی مسابقتی بائیڈنگ (آئی سی بی عمل) کے ذریعہ ، تخمینی بولی سے تقریبا 17 فیصد کی بچت، جون 2019 میں دوسرا مرحلہ دینے کے ساتھ 80 کلومیٹر پر مشتمل 3 اضافی اہم سڑکیں شامل ہیں، ان میں 1) کندھ کوٹ سے 44 کلومیٹر تک کا فاصلہ ہے۔ ، 2) شیران پور سے رتوڈیرو 36 کلومیٹر ، 3) خیبر سے سانگھڑ 64 کلومیٹر ، 4) سانگھڑ سے میرپور خاص سے سندھڑی 63 کلومیٹر ، 5) ٹنڈو محمد خان سے بدین 67 کلومیٹر اور 6) دگری سے نوکوٹ 54 کلومیٹر جبکہ بچت سے اضافی سڑک 1) ٹنڈو الہ یار تا چیمبر 19 کلومیٹر ، 2) سہون ریلوے کراسنگ (N-55) دادو سے تلٹی ہو کر دادو-مورو 32 کلومیٹر تک اور 3) جہان خان سے فیضو لارو کے راستے چک رستم سیکشن 29.1 کلومیٹر۔ پراجیکٹ ڈائریکٹر ایس پی آر آئی پی مشتاق میمن، معظم مغل اور پی ایم یو کی دیگر ٹیم نے شرکا کا شکریہ ادا کیا اور نفیسہ شاہ ایم این اے کو تھری کھیس اور سندھی ٹوپیوں کی تحائف پیش کیں، مسٹر نثار کھوڑو، عمران عطا سومرو، تمام ریٹائرڈ چیف انجینئرز جنہوں نے ورکشاپ میں شرکت کی۔ پی ایم یو اور ایس پی آر آئی پی کے دوسرے عملے کو بھی کارکردگی کے سرٹیفکیٹ دیئے گئے۔

About Author

Leave A Reply