انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی آزادانہ تحقیقات کیلئے رکن ممالک سے عالمی انکوائری کمیشن قائم کرنے کا مطالبہ کر دیا۔ بھارت و پاکستان نے کشمیر میں انسانی حقوق کی صورتحال بہتر کرنے کیلئے کوئی اقدام نہیں کیا: مشل

0

جنیوا/ اسلام آباد(رپورٹ:حارث قدیر/ م ڈ) اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق مشل بیشلیٹ نے جموں کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کی آزادانہ عالمی تحقیقات کیلئے انسانی حقوق کونسل کے رکن ممالک سے عالمی انکوائری کمیشن قائم کرنے کی اپیل کر دی ہے۔
اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفترسے شائع ہونے والی رپورٹ میں دعویٰ کیاگیا ہے کہ گذشتہ بارہ ماہ میں متعدد سویلین اموات رپورٹ ہوئی ہیں جو گذشتہ ایک دہائی میں سب سے زیادہ ہیں، اور اقوام متحدہ کی گذشتہ سال جاری کی گئی رپورٹ میں اٹھائے گئے متعددخدشات کو دور کرنے کیلئے انڈیا اور پاکستان میں سے کسی نے بھی کوئی ٹھوس اقدامات نہیں اٹھائے۔
یہ رپورٹ پیر آٹھ جولائی کو اقوام متحدہ کے کمشنر برائے انسانی حقوق کے مرکزی دفتر سے جاری کی گئی، رپورٹ بھارتی و پاکستانی زیر انتظام کشمیر میں گذشتہ سال مئی سے رواں سال اپریل تک انسانی حقوق کی صورتحال سے متعلق ہے، ایک لمبے عرصہ کے بعد گزشتہ سال جون میں اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق نے جموں کشمیر میں انسانی حقوق کی صورتحال سے متعلق پہلی رپورٹ شائع کی تھی۔
حالیہ رپورٹ 43 صفحات پر مشتمل ہے جن میں سے پہلے تینتیس صفحات میں بھارتی زیر انتظام کشمیر میں انسانی حقوق کی صورتحال سے متعلق خدشات کا اظہار اور بہتری کیلئے سفارشات پیش کی گئی ہیں

دس صفحات پاکستانی زیر انتظام کشمیر بشمول گلگت بلتستان سے متعلق ہیں، اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق ی اپنی ویب سائٹ پر شائع رپورٹ کے جائزے کے مطابق رپورٹ میں وضاحت کی گئی ہے کہ رواں سال فروری میں پلوامہ کے مقام پر بھارتی سکیورٹی فورسزکو خودکش بمباری سے نشانہ بنائے جانے کے بعد کیسے کشیدگی میں شدت آئی اور شہریوں کے انسانی حقوق بشمول زندہ رہنے کے حق پراس کے گہرے اثرات پڑے۔

About Author

Leave A Reply