اسلام آباد کی صحافی میمونہ عارف کی موت زہر سے ہونے کا انکشاف، اسپتال چھوڑنے والا “قریبی دوست” لاپتہ

0

اسلام آباد (ای این این ایس)اسلام آباد کی  صحافی میمونہ عارف کی موت  زہر سے ہونے کا انکشاف ہواہے ۔تفصیلات کے مطابق   نیشنل پریس کلب اسلام آباد کی سابق ممبر گورننگ باڈی  میمونہ عارف کی وجہ موت  زہر بتائی جا رہی ہے۔ پاکستان انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنس (پمز) کی ڈاکٹر امبرین خالد کی سربراہی میں میڈیکل بورڈ تشکیل دیا گیا تھا ۔چار رکنی میڈیکل بورڈ نے رپورٹ مرتب کر کے اسلام آباد انتظامیہ کو بھیجوا دی  ہے۔

رپورٹ میں موت کی وجہ زہر قرار دی گئی ہے۔ یاد رہے کہ میمونہ کو ایک شخص طاہر مسعود نے پمز میں بیہوشی کی حالت میں پہنچایا تھا اور بتایہ گیا تھا کہ صحافی کو برین ہیمرج کا حملہ ہوا جس سے وہ بیہوش ہو گئی۔ تاہم  دو دن کے بعد اس کا انتقال ہوگیا۔ ذرائع  کے مطابق میمونہ نے مبینہ طور پر اپنی والدین کے بارے میں کسی  کونہیں بتایہ تھا، جس کی وجہ سے اس کے والدین کی تلاش نادرا رکارڈ سے کی گئی۔نیشنل پریس کلب میں جب اس کی نماز جنازہ ہو رہی تھی تو اس کے والد وہاں پہنچے اور اس کی میت والد ساتھ لے گئے۔

Mamoona Arif in black suit in a conference. (FB, file photo)

ایک صحافی کے مطابق میمونہ روزانہ کی بنیاد پر طاہر نامی شخص سے ملتی تھی جو خود کو صحافی ظاہر کرتا تھا اور ایف آئی آر کے مطابق وہی شخص اس کو اسپتال چھوڑ کر غائب ہو گیا۔کیس میں اسلام آباد پولیس  اور اس کے اپنے ادارے   کی عدم دلچسپی  ایک بڑا سوالیہ نشان ہے، یہاں تک کہ اس کی ایف آئی آر تک درج نہ ہوئی۔

قانون کے مطابق کوئی بھی کیس داخل کرا سکتا ہے ۔ جب کہ کسی کا کوئی وارث نہ ہو تو پولیس ریاست کے نمائندہ کے طور پر کیس داخل کرنے کی پابند ہے۔ 9جنوری کو انتقال کرنے والی میمونہ کی ایف آئی آر جون میں اس کے والد عارف علی کی مدعیت میں داخل ہوئی ہے۔   اسلام آباد جیسے شہر میں عورت صحافی کا مبینہ قتل صحافت کرنے والی خواتین کے لیے عدم تحفظ کا پیغام دیتا ہے۔

دوسری جانب ایس پی سی آئی اے زبیر شیخ کا کہنا تھا کہ اب بھی وقت ہے کہ موبائل کا فرانزک ٹیسٹ کروایا جاسکتا ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ ورثہ کی جانب سے تحریری درخواست نہ ملنے کی وجہ سے مقدمہ تاخیر سے درج کیا گیا۔

About Author

Leave A Reply